ٓج کاٹوٹکا : اگر زندگی بھر ہارٹ اٹیک سے محفوظ رہنا چاہتے ہیں تو یہ ٹوٹکا آزمائیں، خود بھی ضرور آزمائیں اور دوستوں کیساتھ شئیر کیجئیے

انڈہ بظاہر معمولی نظر آنے والی چیز ہے لیکن دنیا کے اکثر ممالک میں جب تک ناشتے میں انڈے نہ ہو تو اس کو ناشتہ کہا ہی نہیں جاتا۔ اس میں ذائقہ کے ساتھ بھر پور غذائیت بھی ہوتی ہے ۔ اور اس کے ساتھ کمزور جسم والوں کے لئے اس سے بڑھ کر کوئی اکثیر نہیں

انڈے میں پایا جانے والا Lutein اور رکسینتھن کیراٹنائڈ اجزاءکی اقسام ہیں۔ یہ دونوں اجزاءکسی بھی اور غذا کی نسبت انڈے سے نسبتاً آسانی کے ساتھ اور بہتر کوالٹی میں حاصل ہوتے ہیں۔ باقاعدگی سے انڈہ کھانے والوں میں ان اجزاءکی وجہ سے آنکھوں کی بیماری کیٹریکٹ کا خدشہ

بہت کم ہوجاتا ہے۔ایک انڈے میں تقریباً 212ملی گرام کولیسٹرول پایا جاتا ہے لیکن خوش قسمتی سے یہ کولیسٹرول کی مفید قسم ہے جسے کھانے سے خون میں مضر کولیسٹرول کا اضافہ نہیں ہوتا۔انڈوں میں پایا جانے والا کولیسٹرول HDL قسم کا ہوتا ہے جو

کہ صحت کے لئے نقصان کا باعث نہیں ہوتا۔ اس کی وجہ سے دل کی بیماری اور دیگر کئی بیماریوں کا خدشہ کم ہوجاتا ہے۔امریکہ کے ماہرین کے مطابق اگر روزانہ دو دیسی انڈے کھائے جائے تو کبھی بھی ہارٹ اٹیک نہیں ہوتا ۔ایک انڈے میں 6 گرام ہائی کوالٹی پروٹین پائی جاتی ہے اور انسانی

جسم کی ضرورت کے تمام 9 امائنوایسیڈ بھی اس میں پائے جاتے ہیں۔ پروٹین انسانی جسم کے نشوونما کے لئے بنیادی عنصر ہے اور خصوصاً بڑھتے ہوئے بچوں کے لئے نہایت

اہم ہے۔انڈے میں پائے جانے والے مندرجہ بالا متفرق غذائی اجزا کسی بھی دوسری غذا میں بیک وقت دستیاب ہونا بہت مشکل ہیں لہٰذا انڈوں کا باقاعدگی کے ساتھ استعمال بہترین صحت کی ضمانت ہے۔

Reply